مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی،اقوام متحدہ سے انکوائری کا مطالبہ

نئی دہلی(بولونیوز)پاکستان نے اقوام متحدہ سے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر کمیشن آف انکوائری بنانے کا مطالبہ کیا ہے۔اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ملیحہ لودھی نے نیویارک میں سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ کی غیر موجودگی کے باعث ان کی چیف آف اسٹاف ماریا لوئیسا سے ملاقات کی اور انہیں کشمیر میں بگڑتی صورتحال اور بھارتی فیصلےسےعلاقائی امن کو لاحق سنگین خطرات سےآگاہ کیا۔ملیحہ لودھی نے مطالبہ کیا کہ اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے غیرقانونی اقدام سے پیدا بحران میں اپنا کردار ادا کریں اور مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کاجائزہ لینے کے لیے کمیشن آف انکوائری تشکیل دیں۔ملاقات میں ملیحہ لودھی کا کہنا تھا کہ کشمیر پربھارت کا قبضہ ختم کرانا سلامتی کونسل کی ذمہ داری ہے۔دوسری طرف اقوام متحدہ کےانسانی حقوق کےادارے کے ترجمان نےسماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹرپراپنا پیغام جاری کیا،ان کا کہنا تھا کہ بھارت کی جانب سےمقبوضہ کشمیرمیں لگائی گئی پابندیوں کی وجہ سے خطےمیں انسانی حقوق کی صورت حال مزید خراب ہوگئی ہے۔ترجمان نے اپنے ویڈیو پیغام میں کہا کہ میں آپ کی توجہ کشمیر میں انسانی حقوق کے حوالے سے 8 جولائی 2019 کو جاری کی گئی رپورٹ پر مبذول کروانا چاہتا ہوں جس میں وادی کی بدترین صورت حال کا ذکر کیا گیا ہے کہ کس طرح مواصلات کے نظام کو متعدد مرتبہ بند کیا گیا، سیاسی رہنماوں اور کارکنان کو غیر قانونی حراست میں رکھا گیا جبکہ احتجاج کو روکنے کے لیے بھرپور طاقت کا استعمال اورماورائےعدالت قتل کیے گئے، جس کےنتیجےمیں سیکڑوں افراد ہلاک و زخمی ہوئے۔انہوں نے کہا کہ ان پابندیوں کے ذریعے مقبوضہ جموں اور کشمیر کے لوگوں کو ریاست کے مستقبل سے متعلق فیصلوں کے لیے جمہوری نمائندگی سے دوررکھنے کی کوشش کی گئی ہے۔اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کے ترجمان کا کہنا تھا کہ عالمی ادارہ خطے کی موجودہ صورت حال کے حوالے سے دونوں ممالک سے ہر سطح پر رابطے میں ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں