ایف آئی اے اہلکاروں کا موبائل فون سمگلنگ میں ملوث ہونے کا انکشاف

اسلام آباد(بولونیوز)ایف آئی اے اہلکاروں کا موبائل فون سمگلنگ میں ملوث ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔اسلام آباد ایئرپورٹ پر تعینات اے ایس ایف کے اہلکار نے ایف آئی اے اہلکار کو موبائل فونزسے بھرے بیگ سمیت دھرلیا۔ ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے بشیرمیمن نےواقعہ کا سخت نوٹس لیتے ہوئے دو سب انسپکٹرز اور ایک کانسٹیبل کومعطل کرکے انکوائری رپورٹ طلب کرلی ہے۔گزشتہ روز اسلام آباد ایئرپورٹ پرمامور اے ایس ایف پولیس نے ایف آئی اے اہلکارکو موبائل فونزسمگلنگ کے دوران رنگے ہاتھوں دھرلیا۔موصولہ تفصیلات کے مطابق ایف آئی اے کے ملازم کانسٹیبل محمدوقاص بھٹی دبئی سے آنے والے مسافرتوحیدنامی نوجوان سے موبائل فونزسے بھرابیگ فلائٹ کلیرنس کے بعد ایئرپورٹ سے باہرلانے کی کوشش کررہاتھاجواے ایس ایف کے ہتھے چڑھ گیا۔بتایاگیاہے کہ موبائل فونزسے بھرے اس بیگ میں ساٹھ قیمتی ترین موبائل فونزموجودتھے ۔دبئی سے آنے والے مسافرتوحید نے یہ بیگ ایئرپورٹ کے باتھ روم میں جاکر ایف آئی اے اہلکار وقاص بھٹی کے حوالے کیا۔جس کے بعداہلکاریہ بیگ لئے ایئرپورٹ سے باہرلے جانے لگا تو اے ایس ایف پولیس نے دیکھ لیا اورایف آئی اے کے کانسٹیبل وقاص بھٹی کو دھرلیا اوربیگ قبضے میں لے لیا۔بعدازاں دوران تفتیش واقعہ کی سی سی ٹی وی فوٹیج سے مدد لی گئی جس کے بعد ایف آئی اے اہلکاروقاص ، موبائل فونزسے بھرابیگ اور مسافر توحید کو کسٹم حکام کے حوالے کردیاگیا۔ذرائع کاکہناہے کہ ابتدائی تحقیقات کے دوران انکشاف ہواکہ موبائل فونزسمگلنگ میں ایف آئی اے کے دو سب انسپکٹرزجاویداقبال اوراختراقبال گوندل بھی ملوث ہیں۔ ڈی جی ایف آئی اے نے معاملہ کا سخت نوٹس لیتے ہوئے تینوں افسران واہلکار کو معطل کردیا اورڈائریکٹرامیگریشن ناصر محمود ستی کو انکوائری آفیسر مقرر کرکے واقعہ کی مکمل انکوائری کرکے رپورٹ طلب کرلی ہے۔اس موقع پر ڈی جی ایف آئی اے بشیرمیمن کا کہنا تھاکہ غیرقانونی سرگرمیوں میں ملوث عناصر کی ایف آئی اے میں کوئی جگہ نہیں ہے جبکہ تینوں اہلکاروں کے خلاف قانون کے تحت کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں