شدید گرمی میں بندروں کا پارہ ہائی، پانی نہ ملنے پر 15 ہلاک

نئی دہلی(بولونیوز)بھارت میں بندروں کے درمیان پانی پر تصادم ہو گیا جس میں 15 بندر ہلاک ہوگئے۔ایک نجی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق انسانوں میں پانی کیلئے جنگ کے بارے میں اکثر سننے میں آتا ہے تاہم جانور بھی پانی کے لئے آپس میں لڑائی کرسکتےہیں؟ اس کی تازہ مثال بھارتی ریاست مدھیہ پردیش کے جوشی بابا جنگل میں سامنے آئی۔شدید گرمی کی وجہ سے’پانی‘ کی تلاش میں نکلےبندروں کے دو گروہوں کے درمیان تصادم ہوا ہے جس سے 15 بندر ہلاک ہو گئے ہیں۔ ضلعی سطح پر محکمہ جنگلات کے افسر پی ایم مشرا نے بتایا ایسا محسوس ہورہا ہے کہ بندروں کے ایک گروہ نےمخالف گروہ کےساتھ پانی کےحصول پرلڑائی کی ہے جس میں کم از کم 15 بندر ہلاک ہوئے ہیں۔نجی نیوزچینل سےبات کرتےہوئے پی ایم مشرا نے بتایا کہ یہ بہت غیر معمولی اور عجیب بات ہے کہ گھاس پھوس کھانے والے جانور ایسی لڑائیوں میں پڑیں۔ ہم تمام ممکنات بشمول پانی کے حصول کے لیے بندروں کے گروہوں کا آپس میں لڑائی کا جائزہ لے رہے ہیں، اس لڑائی میں 30 سے 35 مضبوط بندروں کے گروہ میں سے 15 بندر ہلاک ہوئے ہیں جو کہ غار میں رہتے تھے۔محکمہ جنگلات کے افسر کا کہنا ہے کہ بندروں کے کچھ گروہ جو تعداد میں زیادہ ہوتے ہیں اور مخصوص علاقے پراثررسوخ رکھتےہے یا علاقے پر ان کا کنٹرول ہوتا ہے تو ہو سکتا ہے کہ انہوں نے بندروں کے چھوٹے گروہ کو پانی پینے پر خوفزدہ کیا ہو۔بندروں کے پوسٹ مارٹم سے معلوم ہوتا ہے کہ ان کی موت کی وجہ شدید گرمی میں پانی نہ ملنے سے ہوئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں