محبت کی شادی کیلئے لڑکی نے باپ پرزنابالجبرکامقدمہ درج کرادیا

چارسدہ(بولونیوز)زمین پھٹی نہ آسمان ٹوٹا۔13سالہ لڑکی نے محبت کی شادی رچانے کےلئے اپنے باپ پر زنا باالجبر کا مقدمہ درج کرلیا۔پولیس نےانوکھے ، ناقابل یقین الزام کا ڈراپ سین کر دیا ۔ لڑکی کا دوست اور اس کی والدہ بھی گرفتار ۔پریمی جوڑا گھر سے بھاگ کر مختلف علاقوں میں تین دن گزارنے کے بعد پولیس کے ہتھے چڑھ گیا ۔ لڑکی کا باپ غیرت اور شرمندگی کی وجہ سے کسی کو منہ دکھانے کے قابل نہ رہے۔تفصیلات کے مطابق ڈی ایس پی فضل شیر خان نے ایس ایچ او تھانہ نستہ سمیع اللہ اور تفتیشی آفیسر منظور خان نے کہا کہ13سالہ لڑکی مسماتہ(ش) دختر بشیر خان نے نستہ تھانہ میں رپورٹ درج کی کہ ان ان کے والد نے ان سے زبر دستی جنسی زیادتی کی ہے ۔ رپورٹ درج کرنے کے بعد لیڈیز پولیس کی نگرانی میں مسماة (ش) کو طبی معائنہ کےلئے ہسپتال منتقل کیا گیا ۔ اس دوران ڈی پی او چارسدہ عرفان اللہ خان اور ایس پی انوسٹی گیشن نذیرخان کوصورتحال سے آگاہ کیا گیا جس پر ماہر پولیس آفسران پر مشتمل ٹیم نے لڑکی کے موبائل کا ڈیٹا حاصل کیا اورجدید طریقہ تفتیش کےذرےعےمعلوم ہو ا کہ مسماة (ش) کا طاہر حسین ولد فقیر حسین نامی لڑکے سے تعلقات ہیں۔پولیس نے دونوں کو گرفتار کرکے علیحدہ علیحدہ تفتیش کی تو معلوم ہوا کہ پریمی جوڑا ایک دوسرے کو پسند کر تے تھے اور آپس میں شادی کے خواہشمند تھے مگر دونوں کے والدین اس پر راضی نہ تھے جس پر پریمی جوڑے نے انتہائی قدم اٹھا کر گھر سے فرار اختیار کی جبکہ لڑکے کے دباﺅ میں آکر مسماتہ(ش)نے اپنے والد پر جنسی زیادتی کا خطرناک الزام لگایا ۔ ڈی ایس پی فضل شیر خان کے مطابق پولیس کی بر وقت کاروائی اور تفتیشی ٹیم کی اعلی کار کر دگی کی وجہ سے ایک باپ پر جنسی زیادتی کا الزام غلط ثابت ہو ا ۔ پولیس نے بعد ازاں لڑکی کو عدالت میں پیش کیا جہاں پر انہوں نے خلف بر قرآن تحریری بیان ریکارڈ کرایا کہ اپنے والد پر جنسی زیادتی کا الزام اپنی پسند کی شادی رچانے کےلئے لگایا گیا تھا جبکہ دوسری طرف ملزم طاہر حسین نے نستہ تھانے میں میڈیا سے بات چیت کر تے ہوئے کہا کہ جیل سے نکل کر وہ مسماتہ(ش) سے ضرور شادی کریگا کیونکہ انہیں یقین ہے کہ مسماتہ(ش) میرے علاوہ کسی سے شادی نہیں کریگی ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں