کورنگی تھانے کے دوپولیس اہلکاربے گناہ شہریوں کوحراساں کرنے لگے

کراچی(بولونیوز)ضلع کورنگی کے دوتھانوں میں تعینات پولیس اہلکارغیرقانونی سرگرمیوں کے ساتھ بے گناہ شہریوں کو حراساں کرنے لگے,عدالت کے احکامات کی روشنی میں گٹکے ماوے کے کارخانے پرکارروائی کے دوران برآمد ہونے والا چھالیہ اورتمباکوکی فروخت میں بھی ملوث ہیں,ایس ایس پی انوسٹی گیشن کورنگی کرپٹ پولیس اہلکاروں کے خلاف انکوائری تشکیل دیں,شعبہ تفتیش کے2 سپاہیوں کوڈی ایس پی کی سرپرستی حاصل ہے,جس کی وجہ سے لانڈھی اور عوامی کالونی کے میں رشوت کا بازار گرم کر رکھا ہے,ذرائع سے معلوم ہوا کہ پولیس اہلکار ہاشم اور اشرف لانڈھی کورنگی کے علاقے میں قائم پان کے کیبنوں اورپرچوں کی دکانوں کواپنا خاص ہدف بنا رکھا ہے,گٹکے ماوے کوآڑبناکرغریب افراد کےپان کے کیبنوں اورپرچوں کی دکانوں کا صفایا کرنے میں ملوث ہے,بااثرپولیس اہلکار کے خلاف متعلقہ تھانیدارکسی شہری کی درخواست وصول بھی نہیں کی جاتی,لانڈھی کورنگی کے مکینوں کا کہنا ہے کہ لانڈھی تھانے کے شعبہ تفتیش میں تعینات پولیس اہلکار ہاشم اوراشرف عوامی کالونی تھانے میں اسپیشل پارٹی چلا رہے ہیں,پان کے کیبنوں سے چھالیہ تمباکو میں کھتہ ملا کر گٹکے کا الزام عائد کرکے بھاری رقم رشوت کے عوض وصول کرتے ہیں, رشوت نہ دیننے والے کے خلاف جھوٹے مقدمات قائم کرتے ہیں,علاقے مکینوں کے مطابق ڈی ایس پی لانڈھی خالد جاوید مذکورہ پولیس اہکاروں کی سرپرستی کرتا ہے,ایس ایس پی کورنگی اور شعبہ تفتیش کے ایس ایس پی کورنگی سے اپیل ہے کہ راشی پولیس اہلکاروں کے خلاف انکوائری تشکیل دیں,ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ ہاشم اور اشرف لانڈھی کورنگی میں مضر صحت گٹکے ماوے کے کارخانے سے متعلقہ تھانوں کے ڈی ایس پی خالد کے نام پربھتہ بھی وصول کرتے ہیں,جبکہ لانڈھی کورنگی کے علاقے میں4 مضر صحت گٹکے ماوے کے کارخانے بھی مذکورہ پولیس اہلکاروں نے قائم کئے ہوئے ہیں,ذرائع نے بتایا کہ لانڈھی کورنگی کے علاقے میں گٹکے ماوے کے کارخانے سے بھاری مقدار میں برآمد ہونے والا چھالیہ ملیر کے بدنام پولیس اہلکار بیٹر طارق منہاس عرف پیجاروپرفروخت کرنے میں ملوث ہے,ذرائع سے معلوم ہوا کہ لانڈھی کورنگی کے علاقے میں عدالت کے احکامات کی روشنی میں پولیس کی جانب سے گٹکے ماوے کے کارخانے پر کارروائی کے دوران برآمد ہونے والا چھالیہ اور تمباکو 70 فیصد تک مال غائب کردیا جاتاہے, بمشکل 10 سے 20 فیصد مقدمہ میں کورٹ پراپرٹی شو کیا جاتا ہے,ذرائع کے بقول پولیس اہلکار ہاشم اور اشرف کا کال ڈیٹا ریکارڈ چیک کیا جائے تو کئی جرائم پیشہ افراد کو لاکھ روپے بھتہ کے عوض رہا کرچکے ہیں, جبکہ کئی جرائم پیشہ افراد کی پشت پناہی کرنے کے ثبوت بھی مل سکتے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں