العزیزیہ،فلیگ شپ ریفرنسز،دوسری عدالت منتقل کرنیکی درخواست مسترد

اسلام آباد(بولونیوز) احتساب عدالت نے نواز شریف کی العزیزیہ اور فلیگ شپ ریفرنسزدوسری عدالت منتقل کرنے کی درخواست مسترد کر دی۔ جج احتساب عدالت نے کہا ریفرنس منتقل کرنے کا اختیار ہائیکورٹ کے پاس ہے۔ نواز شریف نے دونوں ریفرنس دوسری عدالت منتقل کرنے کی درخواست کی تھی۔تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت میں جج محمد بشیر نے العزیزیہ ریفرنس کی سماعت کی، وکیل خواجہ حارث نے ریفرنس منتقل کرنے کی درخواست کی اور موقف اختیار کیا کہ آپ جے آئی ٹی رپورٹ اور گلف اسٹیل سے متعلق فیصلہ سنا چکے، آپ کی ذات پر اعتراض نہیں، قانون کا تقاضا ہے ریفرنس منتقل کئے جائیں۔جج محمد بشیر نے ریمارکس دیئے کہ قانون کے مطابق فرد جرم عائد کرنے کے بعد میں ریفرنس منتقل نہیں کرسکتا،ریفرنس منتقل کرنے کے لئے متعلقہ فورم ہائیکورٹ ہے،اگردوسرے صوبے میں کیس منتقل کرنا ہو تو سپریم کورٹ متعلقہ فورم ہے۔ایک نجی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق احتساب عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس میں سابق وزیرِاعظم نوازشریف کو10سال قید،ایک ارب29کروڑروپے جرمانہ،مریم نوازکو7سال قید،32کروڑروپے جرمانہ،شریف فیملی کے ایون فیلڈ اپارٹمنٹس بحقِ سرکارضبط کرنے کا حکم اور کیپٹن ریٹائرڈ صفدرکوبھی ایک سال قید بامشقت کی سزا سنائی تھی۔واضح رہے کہ جج احتساب عدالت محمد بشیر کے عدالتی حکم میں جھوٹی دستاویزات جمع کرانے پرمریم نوازکومزید ایک سال قید بھی سنائی گئی۔ عدالت نے کیس کے شریک ملزموں حسین اور حسن نواز کے دائمی وارنٹ گرفتاری بھی جاری کئے۔عدالتی آرڈر میں کہا گیا کہ تمام مجرمان کو اپیل میں جانے سے پہلے سرنڈر کرنا ہو گا۔