سپریم کورٹ کا حکم: بحریہ ٹاؤن کراچی کے الاٹیز کا سرمایہ داؤ پر لگ گیا

اسلام آباد (ایچ آراین ڈبلیو) سپریم نے بحریہ ٹاؤن کراچی سے متعلق اہم کیس کا فیصلہ سنا دیا- جسٹس اعجاز افضل کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے فیصلہ سنایا، عدالت نے بحریہ ٹاؤن کراچی کو پلاٹوں کی فروخت سے روک دیا ہے _

سپریم کورٹ نے بحریہ ٹائون کراچی کو رہائشی و کمرشل پلاٹوں، عمارات کی فروخت سے روک دیا، بحریہ ٹائون کو زمین کی الاٹمنٹ اور تبادلہ غیرقانونی قرار دے دیا گیا ہے، عدالت نے ملیر ڈویلپمینٹ اتھارٹی کی زمین کی غیر قانونی الاٹمنٹ کی تحقیقات کا حکم بھی دیا ہے _

پاکستان 24 کے مطابق عدالت نے تین ماہ میں ملوث افراد کیخلاف تحقیقات کرکے ریفرنس دائر کیا جائے، فیصلے میں کہا گیا ہے کہ چیف جسٹس فیصلے پر عملدرآمد کیلئے خصوصی بنچ تشکیل دیں، فیصلے کے مطابق عدالت کے علم میں آیا کہ ڈی ایچ اے کو کوڑیوں کے بھائو زمین دی گئی، چیف جسٹس ڈی ایچ اے کراچی کو زمین دینے پر ازخودنوٹس لیں،

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ سندھ حکومت کا بحریہ ٹائون کیساتھ زمین کا تبادلہ قانون کے مطابق کیا جا سکتا ہے، زمین کے تبادلے کی شرائط اور قیمت عدالت کا عملدرآمد بنچ طے کرے گا،