یوم مئی،مزدورکی تنخواہ 40 ہزارروپے مقررکرنے کا مطالبہ

کراچی(بولونیوز) مزدور رہنماؤں نے 132 ویں یوم مئی کے موقع پر پریس کلب میں ٹریڈ یونین، سول سوسائٹی اور صحافی تنظیموں کے زیر اہتمام جلسے، ریلیوں اور مظاہروں سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ مزدوروں کی تنخواہ 40ہزارمقررکی جائے۔تفصیلات کے مطابق تمام نجی فیکٹریوں، اداروں اورملوں میں سرکاری طرزکا پنشن اور مراعاتی نظام متعارف کرایا جائے،کم از کم پنشن 20ہزار روپے مقررکی جائے، قومی اداروں کی نجکاری بند کی جائے،حکومتی خصوصی ہیلتھ اسکیم متعارف کرائی جائے،پارلیمنٹ اور صوبائی اسمبلیوں میں مزدوروں کی نشستیں مخصوص کی جائیں ، لیبر قوانین میں اصلاحات کی جائیں ، ٹھیکیداری نظام ختم کیا جائے، ٹریڈ یونین کو آزادی سے کام کرنے دیا جائے۔یاد رہے کہ قومی اداروں کی نجکاری کی گئی اور مزدوروں کے مطالبات تسلیم نہ کیے گئے تو حکومت کے خلاف ملک گیر تحریک چلائیں گے، پریس کلب پر جلسہ عام سے سابق چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی، پائلرکے رہنما کرامت علی،لیاقت علی ساہی پریس کلب کے صدر احمد خان ملک، نیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن کے رہنما ناصر منصور، مزدور رہنما حاجی گل آفریدی نے خطاب کیا ، سابق چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی نے کہا کہ اقتصادی نظام مزدوروں کا استحصال کررہا ہے، ضیا دور میں طلبہ تنظیموں پر پابندی لگاکرجمہوری قوتوںکوکمزورکیا گیا سیاسی جماعتیں اپنی سوچ تبدیل کریں،جمہوریت کے استحکام کے لیے جدوجہد کریں اس کے بغیر محنت کشوں کے مسائل حل نہیں ہوں گے انھوں نے کہا کہ آمریت کے خلاف جدوجہد میں مزدوروں اور ٹریڈ یونین نے ہمیشہ جمہوری قوتوں کا بھرپور ساتھ دیا ٹریڈ یونین کو آزادی ہونی چاہیے نجی اداروں میں تھرڈ پارٹی کنٹریکٹ غیرآئینی ہے ۔