رات گئے تک جاگنے کا ایک اور فائدہ سامنے آگیا

رات گئے دیر تک جاگنے والے افراد اور صبح جلد بستر سے نکلنے والے لوگوں میں ایک فرق نمایاں ہوتا ہے اور وہ ہے زیادہ وسیع سماجی تعلقات۔

جی ہاں رات گئے دیر تک جاگنے والوں کو صبح جلد اٹھنے والوں کے مقابلے میں یہ سبقت حاصل ہے۔

یہ دعویٰ فن لینڈ میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا۔

التو یونیورسٹی کی تحقیق میں بتایا گیا کہ رات گئے تک جاگنے والے افراد کو اپنے سماجی تعلقات کے نیٹ ورک میں مرکزی حیثیت حاصل ہوتی ہے اور اپنے جیسے لوگوں سے رابطے بڑھانا ان کو پسند ہوتا ہے۔

تحقیق میں بتایا گیا کہ موجودہ ڈیجیٹل دور میں لوگوں کو مانیٹر کے پیچھے محدود کردیا ہے، جس کے ذریعے وہ اپنی سرگرمیوں اور رابطوں کی تصویر پیش کرتے ہیں۔

اور یہ حیران کن امر نہیں کہ رات گئے تک جاگنے والے افراد سماجی تعلقات کے حوالے سے آگے ہیں۔

محققین کا کہنا تھا کہ جسمانی گھڑی میں مداخلت کرتے ہوئے اپنے سونے کا وقت آگے پیچھے کرنا ہوسکتا ہے کہ متعدد امراض کا باعث بنتا ہو مگر یہ عنصر موجودہ دور میں سماجی تعلقات بہتر بنانے میں مدد دیتا ہے۔

اس سے قبل گزشتہ سال ایک تحقیق میں یہ دعویٰ بھی سامنے آیا تھا کہ جو لوگ رات گئے تک جاگنے کے عادی ہوتے ہیں، وہ صبح جلد اٹھنے والوں کے مقابلے میں زیادہ ذہین ہوتے ہیں۔

تحقیق کے بقول رات کو زیادہ فعال رہنے والے افراد زیادہ ذہانت کے حامل ہوسکتے ہیں۔

تحقیق کے مطابق اوسط یا کم تر ذہانت کے حامل افراد اب بھی سونے کے اسی رجحان پر عمل کرتے ہیں جو ہمارے آباﺅ اجداد کا تھا جبکہ زیادہ ذہین دماغ اس کو نظر انداز کرکے خود کو رات گئے تک زیادہ متحرک رکھتے ہیں۔